کپتان تیار ی کرلو: اگر جلد الیکشن ہوئے تو عمران خان کا مقابلہ کس سے ہوگا ؟

کپتان تیار ی کرلو: اگر جلد الیکشن ہوئے تو عمران خان کا مقابلہ کس سے ہوگا ؟ سہیل وڑائچ نے دھماکہ خیز بریکنگ دے دی

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ اگر قبل ازوقت انتخابات نہ ہوئے تو ملک میں خانہ جنگی کا خدشہ ہے، آصف علی زرداری کا شاگرد بننے کے لئے مجھے سو مرتبہ مرکر زندہ ہونا ہوگا، فاٹا کو جلد سے جلد خیبر پختونخوا میں ضم نہیں کیا گیا تو وہاں دوبارہ سے دھشت

گردی شروع ہوسکتی ہے۔ جبکہ دوسری جانب سابق وزیراعظم نواز شریف کی سربراہی میں پاکستان مسلم لیگ (ن) کے غیر رسمی اجلاس میں وزیراعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف کو نیا وزیراعظم بنانے کا فیصلہ کرلیا گیا۔ اسی پر تبصرہ کرتے ہوئے سہیل وڑائچ نے کہا پتہ تو نہیں کہ اسٹبلیشمنٹ کیا چاہتی ہے بظاہر ایسا لگ رہا ہے کہ دو امیدوار سلکٹ ہو گئے ایک شہباز شریف اور دوسرے عمران خان انہوں نے کہا کہ اگر جلد الیکشن ہوتے ہیں تو عمران خان کا مقابلہ شہباز شریف سے ہوگا۔ جبکہ دوسری جانب پاکستان میں حکمران جماعت مسلم لیگ نواز کی جانب سے آئندہ انتخابات میں وزارتِ عظمیٰ کے اُمیدوار کے طور پر شہباز شریف کا نام سامنے آنے کے بعد شریف خاندان میں بظاہر پائی جانے والی غلط فہمیوں کی افواہیں دم توڑ گئی ہیں۔ بدھ کو مسلم لیگ نواز کے رہنما نواز شریف نے اپنی رہائش گاہ پر ہونے والے اجلاس میں اعلان کیا تھا کہ آئندہ انتخابات میں شہباز شریف اُن کی جماعت کی جانب سے وزیراعظم کے عہدے کے اُمیدوار ہوں گے۔ سیاسی مبصرین کا کہنا ہے کہ یہ فیصلہ مسلم لیگ نواز کی جانب سے اسٹیبلشمنٹ کے بارے میں حکمتِ عملی کا حصہ ہے۔ مسلم لیگ نواز کے رکنِ اسمبلی رانا افضل کا کہنا ہے کہ

نواز شریف کی جانب اس اعلان کے بعد صورتحال واضح ہو گئی ہے۔ رانا افضل کا کہنا ہے کہ’پارٹی پر تنقید ہو رہی تھی کہ شاید ان میں آپس میں کچھ غلط فہمیاں ہیں اور دوسری جماعتیں یہ کہہ رہی تھیں پارٹی تقسیم ہو رہی ہے۔ اب چیزیں واضح ہو گئیں ہیں۔‘ عام طور یہ خیال کیا جا رہا تھا کہ سپریم کورٹ کی جانب سے نواز شریف کے نااہلی کے فیصلے کے بعد نواز شریف کے سخت ردعمل پر شریف خاندان میں اختلافِ رائے پایا جاتا ہے۔ نواز شریف عدلیہ اور مختلف اداروں پر جانبداری کا الزام عائد کر رہے ہیں جبکہ شہباز شریف محاذ آرائی سے گریز کرنے کا مشورہ دیتے رہے ہیں۔ تجزیہ کار سہیل وڑائچ کا کہنا ہے کہ شہباز شریف نے ہمیشہ اپنے بھائی کو ایک دوسرا رخ دکھانا کی کوشش کی ہے۔ بی بی سی بات کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ وزیراعظم کے لیے شہباز شریف کے نام کا اعلان مسلم لیگ نون کا ایک ’ٹیکٹیکل اقدام‘ ہے۔ سہیل وڑائچ کے مطابق مسلم لیگ نواز اس فیصلے سے الیکشن میں فائدہ اُٹھانا چاہتی ہے۔ انھوں نے کہا کہ ’مسلم لیگ نواز فیصلے سے اسٹیبلشمنٹ کو یہ پیغام دینا چاہتی ہے کہ وہ اُسے لانا چاہتے ہیں جنھیں وہ پسند کرتے ہیں جبکہ دوسری جماعتوں کو یہ پیغام دے رہے ہیں شہباز شریف جیسا وزیر اعلیٰ اُن کا امیدوار ہے۔‘

Should Computer Science be a mandatory part of a high school curriculum? The answer depends on the time horizon, and also on how one defines “computer science.” The question is moot in the short-term. In the long run, computational thinking and digital literacy will be mandatory, although perhaps integrated in other fields or introduced earlier, before high school.
In the short run: schools would need to offer computer science courses before requiring students study it.
Before answering this question, one must first ask whether schools can actually teach computer science. Today, most high schools don’t teach computer science, they don’t have a computer science teacher, so mandating that every student learn a field that isn’t even offered is silly. Fortunately, schools throughout the U.S. are now taking steps to offer computer science. And 56% of teachers believe computer science should be mandatory for all students [1]. And with Code.orgtraining tens of thousands of new C.S. teachers per year, making computer science mandatory may be possible in less than a decade.
In the long-run: parts of computer science (computational thinking and digital literacy) will be mandatory learning, starting in grades K-8.
Computational thinking – which is the logic, algorithmic thinking, and problem-solving aspects of computer science – provides an analytical backbone that is useful for every single student, in any career. Schools teach math to students regardless of whether they want to become mathematicians, because it is foundational. The same is true of computer science. Consider, at the university level, computer science satisfies graduation requirements for 95% of B.S. degrees [2].
Digital literacy – understanding things like what is the “cloud,” what are “cookies,” or how does “encryption” work – these are useful for every student, regardless of whether they want to become a lawyer, a doctor, or a coder. They are just as foundational as learning about photosynthesis, the digestive system, or other topics one learns in high school science classes.
The coding aspects of computer science – learning the syntax of a specific programming language such as C++, Java, or Python – the syntactical expertise in one language is least likely to stand the true test of time. The programming language you learn in high school is unlikely to be popular 10 years later, and it’s hard to argue that everystudent must be required to learn any single language. However, teaching a coding language is often necessary for teaching computational thinking or algorithm design, and so it’s a key part of most C.S. education.
The U.S. education system is rapidly changing to broaden access to C.S., and even to require it in many regions.
In many U.S. states (e.g. Arkansas, Virginia, Indiana), computational thinking and digital literacy have already been integrated into the mandatory standards of learning for K-8 students. In these states, the most important foundational aspects of this field will be taught to every student before they even enter high school. When students receive that background in primary school, they can decide for themselves whether they want to take a deeper programming course in high school.
At Code.org, we don’t advocate for making computer science mandatory in high school. We advocate for integrating aspects of it in primary school (grades K-8). But we also support the ambitious school districts (such as Chicago, and Oakland) that have already decided to make it a mandatory high school course.