عمرا ن خان کا بڑا سیاسی چھکا: 100 سے زائد شخصیات نے عمران خان کی قائدانہ صلاحیتوں کا اعتراف کرتے ہوئے پی ٹی آئی میں شمولیت اختیار کر لی

عمرا ن خان کا بڑا سیاسی چھکا: 100 سے زائد شخصیات نے عمران خان کی قائدانہ صلاحیتوں کا اعتراف کرتے ہوئے پی ٹی آئی میں شمولیت اختیار کر لی

لاہور(ویب ڈیسک)پیپلز پارٹی کے کونسلر سمیت دیگر 100 سے زائدکارکنان پارٹی سے بدظن ہوکر تحریک انصاف کی کشتی میں سوار ہوگئی۔تفصیلات کے مطابق پیپلز پارٹی کے صوبائی وزیر و خوابوں کے شہنشاہ منظور وسان کا خواب ادھورا رہ گیا،پیپلز پارٹی کے کونسلر سمیت دیگر 100 سے زائدکارکنان پارٹی سے بدظن ہوکر تحریک انصاف کی کشتی میں سوار ہوگئے۔

تفصیلات کے مطابق سابق وزیر اعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ کے قریبی ساتھی پیپلز پارٹی کے رہنماء اورسابق وزیر اعلیٰ سندھ ہائوس کے میونسپل کمیٹی وارڈ 6کے کونسلر سید ثابت علی شاہ،پیپلز پارٹی یونین کونسل وڈا ماچھیوں کے رہنمائوں عابد علی جاگیرانی،شہزادو جاگیرانی،ڈبر خیرپور کے معروف پٹھان،منور علی شاہ گادی نشین درگاہ یتیم شاہ و پی پی سٹی صدرخیرپور،حفیظ ارحمٰن بگھیو پی پی صدر یوسی بخاری،اسد چھجڑو سابق پی پی کونسلر،باسط علی جلبانی سماجی ورکر،محمد ہاشم رندپی پی رنماء تعلقہ کوٹ ڈیجی ،عامر کیھر،کامران شیخ،نعیم ابڑو،مجاہد جمانی نے اپنے سینکڑوں ساتھیوں مریدوں کے ہمراہ پاکستان تحریک انصاف سندھ کے رہنماء پیر سید سمیع اللہ شاہ راشدی،سکھر کے ڈویژنل صدرغلام عباس چاچڑ،سکھر ضلع صدرمبین احمد جتوئی،خیرپور پی ٹی آئی صدر سید شاکر شاہ،جنرل سیکرٹری ڈاکٹر واجد علی مھراور میڈیا کی موجودگی میں تحریک انصاف میں شمولیت کا اعلان کیا گیا۔ واضح رہے کہ اس سے قبل پیپلزپارٹی کے سینیٹر بابر اعوان نے تحریک انصاف میں شمولیت اختیار کی تھی۔ بابر اعوان نے سینٹ کی نشست سے استعفیٰ دیا تھا۔ بابر اعوان نے کہا کہ وقت آگیا ہے کہ میں حقیقی اپوزیشن جماعت میں شامل ہو جاﺅں۔ اللہ نے میری رہنمائی کی۔ اکیس سال بعد پیپلزپارٹی کی بنیادی رکنیت سے استعفیٰ دے رہا ہوں۔ میں اپنی اور پوری فیملی کی طرف سے پاکستان کے مستقبل اور کپتان کو خوش آمدید کہتا ہوں۔

سینیٹر شپ چھوڑ کر تحریک انصاف میں شامل ہونا ایک چیلنج تھا۔ سابق وفاقی وزیر نے کہا کہ تبدیلی گھر بیٹھے نہیں آئے گی۔ انصاف کے حصول کیلئے وزارت چھوڑ دی۔ میرا ایجنڈا اقتدار ہوتا تو 2018ءتک سینیٹر رہتا۔ ان کا کہنا تھا کہ وکلاءاور میڈیا کا احسان کبھی نہیں بھلا سکتا۔ جبکہ دوسری جانب تحریک انصاف کے سینئر رہنما و مرکزی ڈپٹی سیکریٹری جنرل عمران اسماعیل نے کہا ہے کہ پیپلز پارٹی نے ہمیشہ شہر کراچی اور اسکے شہریوں کے ساتھ سوتیلی ماں جیسا سلوک کیا ہے ۔ 9 سال سے سندھ اور کراچی کے وسائل پر قابض پیپلز پارٹی کی کرپٹ قیادت اور انکے درباری وزراء نے شہر کراچی کو کھنڈرات میں تبدیل کرنے کی ٹھانی ہوئی ہے ۔ عمران خان کے کراچی دورے کے موقع پر کئی اہم سیاسی شخصیات تحریک انصاف میں شمولیت کا اعلان کریں گی۔عمران اسماعیل نے کہا کہ تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کے سندھ میں ایک کے بعد ایک کامیاب ترین جلسے دیکھ کر پیپلز پارٹی بوکھلاہٹ کا شکار ہوچکی ہے ۔ ذرائع کے مطابق ایوب خاندان نے مسلم لیگ کو خیر آباد کہہ کر پی ٹی آئی میں شمولیت اختیار کر لی اطلاعات کے مطابق سابق وزیر خارجہ گوہر ایوب خان اور سابق وزیر خزانہ عمر ایوب خان عمران خان سے ملاقات میں پارٹی میں شامل ہونے والے ہیں – اب پنجاب میں بھی تحریک انصاف کی طاقت میں تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے۔

Should Computer Science be a mandatory part of a high school curriculum? The answer depends on the time horizon, and also on how one defines “computer science.” The question is moot in the short-term. In the long run, computational thinking and digital literacy will be mandatory, although perhaps integrated in other fields or introduced earlier, before high school.
In the short run: schools would need to offer computer science courses before requiring students study it.
Before answering this question, one must first ask whether schools can actually teach computer science. Today, most high schools don’t teach computer science, they don’t have a computer science teacher, so mandating that every student learn a field that isn’t even offered is silly. Fortunately, schools throughout the U.S. are now taking steps to offer computer science. And 56% of teachers believe computer science should be mandatory for all students [1]. And with Code.orgtraining tens of thousands of new C.S. teachers per year, making computer science mandatory may be possible in less than a decade.
In the long-run: parts of computer science (computational thinking and digital literacy) will be mandatory learning, starting in grades K-8.
Computational thinking – which is the logic, algorithmic thinking, and problem-solving aspects of computer science – provides an analytical backbone that is useful for every single student, in any career. Schools teach math to students regardless of whether they want to become mathematicians, because it is foundational. The same is true of computer science. Consider, at the university level, computer science satisfies graduation requirements for 95% of B.S. degrees [2].
Digital literacy – understanding things like what is the “cloud,” what are “cookies,” or how does “encryption” work – these are useful for every student, regardless of whether they want to become a lawyer, a doctor, or a coder. They are just as foundational as learning about photosynthesis, the digestive system, or other topics one learns in high school science classes.
The coding aspects of computer science – learning the syntax of a specific programming language such as C++, Java, or Python – the syntactical expertise in one language is least likely to stand the true test of time. The programming language you learn in high school is unlikely to be popular 10 years later, and it’s hard to argue that everystudent must be required to learn any single language. However, teaching a coding language is often necessary for teaching computational thinking or algorithm design, and so it’s a key part of most C.S. education.
The U.S. education system is rapidly changing to broaden access to C.S., and even to require it in many regions.
In many U.S. states (e.g. Arkansas, Virginia, Indiana), computational thinking and digital literacy have already been integrated into the mandatory standards of learning for K-8 students. In these states, the most important foundational aspects of this field will be taught to every student before they even enter high school. When students receive that background in primary school, they can decide for themselves whether they want to take a deeper programming course in high school.
At Code.org, we don’t advocate for making computer science mandatory in high school. We advocate for integrating aspects of it in primary school (grades K-8). But we also support the ambitious school districts (such as Chicago, and Oakland) that have already decided to make it a mandatory high school course.