ریحام! تجھے رنجیدہ نہیں ہونا چاہئے تو بہت اچھے انسان کی بیوی ہے

’’ریحام! تجھے رنجیدہ نہیں ہونا چاہئے تو بہت اچھے انسان کی بیوی ہے، مجھے تو۔۔۔۔۔۔‘‘ بانو قدسیہ نے ریحام خان کو عمران خان کے بارے میں کیا نصیحتیں کی تھیں؟ جان کر آپ کپتان پر فخر کریں گے۔۔۔۔۔۔۔ لاہور( مانیٹرنگ ڈیسک) بانو قدسیہ کی شخصیت سے کون واقف نہیں؟ پاکستانی ادب کا ایسا نام ہیں جنہوں نے اپنی مدد آپ کے تحت ادب کے لیے اتنی گراں قدر خدمات سر انجام دی ہیں کہ کوئی بھی انہیں نہیں بھلا سکتا، وہ عمران خان کو کس قدر اچھا سمجھتی تھی

اور انہوں نے ریحام خان کو عمران خان کے بارے میں کیا کہا تھا جان کر آپ بھی حیران رہ جائیں گے۔تفصیلات کے مطابق شادی کے بعد ریحام خان جب بطور میزبان ایک نجی ٹی وی کے پروگرام کی جانب سے بانو آپا کا انٹرویو کرنے گئیں تو انہوں نے پوچھا جو لوگ آپ کے ساتھ رہتے ہیں ہر وقت کام والے یا گھر کے دیگر افراد کیا وہ بھی آپ سے کہانیاں سننے کا مطالبہ کرتے ہیں یا آپ انکو قصے کہانیاں سناتی ہیں؟ جسکا جواب دیتے ہوئے بانو آپا کا کہنا تھا کہ جو لوگ میرے ساتھ ہوتے ہیں وہ مجھ سے ملتے ہیں میری کہانیوں سے نہیں ملتے۔ جس پر ریحام خان کا کہا تھا کہ اگر میں آپ کے سات رہتی ہوتی تو دن میں کم از کم ایک بار لازمی آپ سے کچھ سننے کا مطالبہ کرتی۔ جسکا واب دیتے ہوئے بانو قدسیہ کا کہنا تھا کہ ’’ توں اس لیے یہ بات کرے گی کیوں کہ تُوں عمران کے ساتھ رہتی ہے، ایک زمانہ تھا جب میں بھی عمران سے محبت کرتی تھی، وہ مجھے ملنے آیا کرتا تھا، اُس وقت تُوں تو موجود ہی نہیں تھی کہانی میں ‘‘ یہ سننے کے بعد ریحام خان نے

ایک قہقہہ لگاتے ہوئے کہا کہ بانو آپا آپ کو معلوم ہے کہ جب میں ہیروز کے انٹرویو کرنے کی لسٹ تیار کر رہی تھی تو عمران نے مجھے کہا کہ ’’ ریحام ! تم نے بانو آپا کا نام نہیں لکھا؟ بانو کا تم ضرور انٹر ویو کر کے آنا ‘‘۔ بانو آپا نے ریحام خان کو نصیحت کرتے ہوئے کہا کہ’’ ریحام تم نے بالکل بھی رنجیدہ نہیں ہونا، تُوں تو ایک بہت ہی اچھے انسان کے ساتھ رہتی ہے، تجھے معلوم ہی نہیں عمران خان کتنا اچھا انسا ہے اور میرے کتنے قریب تھا، وہ میرے شوہر کے قریب تھا اس لیے میرے بھی بہت قریب تھا، وہ ہمیں ملنے آیا کرتا تھا ۔ عمران ہمارے گھر کے سامنے کرکٹ کھیلا کرتا تھا، ہمارے گھر میں اندر کسی کو آنے کی اجازت نہیں تھی سوائے عمران کے‘‘۔ بانو آپا نے گفتگو کے دوران ریحام خان سے کہا ’’ میں نے کبھی عمران خان کو کبھی نصیحت نہیں کی، کیونکہ وہ مجھے پیارا ہی بہت لگتا تھا، انہوں نے کہا کہ ریحام تجھے نہیں پتہ میں کتنی حس پرست تھی، اب تم اتنی خوبصورت ہو تو تمہیں کیسے ڈانٹا جائے؟ ‘‘ ریحام خان نے کہا کہ مجھے لگتا ہے کہ مجھے ی پروگرام ایڈت کرنا پڑے گا یا سنسر کرنا پڑے گا کیونکہ لوگ کہیں گے کہ میں جان بوجھ کر ایسے لوگوں کا انٹر ویو کرنے جاتی ہو جو عمران خان کی تعریفیں کرتے ہیں ، ہم تو یہاں آپ کے حسن تخلیق کے بارے میں جاننا چاہتے ہیں ، آپ کے بارے میں جاننا چاہتے ہیں اور آپ عمران خان کی تعریف کی جارہی ہیں تو خدا جانتا ہے ہم نے اس پروگرام میں کوئی دھاندلی نہیں کی۔

Should Computer Science be a mandatory part of a high school curriculum? The answer depends on the time horizon, and also on how one defines “computer science.” The question is moot in the short-term. In the long run, computational thinking and digital literacy will be mandatory, although perhaps integrated in other fields or introduced earlier, before high school.
In the short run: schools would need to offer computer science courses before requiring students study it.
Before answering this question, one must first ask whether schools can actually teach computer science. Today, most high schools don’t teach computer science, they don’t have a computer science teacher, so mandating that every student learn a field that isn’t even offered is silly. Fortunately, schools throughout the U.S. are now taking steps to offer computer science. And 56% of teachers believe computer science should be mandatory for all students [1]. And with Code.orgtraining tens of thousands of new C.S. teachers per year, making computer science mandatory may be possible in less than a decade.
In the long-run: parts of computer science (computational thinking and digital literacy) will be mandatory learning, starting in grades K-8.
Computational thinking – which is the logic, algorithmic thinking, and problem-solving aspects of computer science – provides an analytical backbone that is useful for every single student, in any career. Schools teach math to students regardless of whether they want to become mathematicians, because it is foundational. The same is true of computer science. Consider, at the university level, computer science satisfies graduation requirements for 95% of B.S. degrees [2].
Digital literacy – understanding things like what is the “cloud,” what are “cookies,” or how does “encryption” work – these are useful for every student, regardless of whether they want to become a lawyer, a doctor, or a coder. They are just as foundational as learning about photosynthesis, the digestive system, or other topics one learns in high school science classes.
The coding aspects of computer science – learning the syntax of a specific programming language such as C++, Java, or Python – the syntactical expertise in one language is least likely to stand the true test of time. The programming language you learn in high school is unlikely to be popular 10 years later, and it’s hard to argue that everystudent must be required to learn any single language. However, teaching a coding language is often necessary for teaching computational thinking or algorithm design, and so it’s a key part of most C.S. education.
The U.S. education system is rapidly changing to broaden access to C.S., and even to require it in many regions.
In many U.S. states (e.g. Arkansas, Virginia, Indiana), computational thinking and digital literacy have already been integrated into the mandatory standards of learning for K-8 students. In these states, the most important foundational aspects of this field will be taught to every student before they even enter high school. When students receive that background in primary school, they can decide for themselves whether they want to take a deeper programming course in high school.
At Code.org, we don’t advocate for making computer science mandatory in high school. We advocate for integrating aspects of it in primary school (grades K-8). But we also support the ambitious school districts (such as Chicago, and Oakland) that have already decided to make it a mandatory high school course.