اچھا جی: ببلو کا پاپا اب تحریک چلائے گا

لاہور (ویب ڈیسک) چھا جی اب خیر سے تحریک چلائی جائے گی اور وہ بھی عدلیہ کے خلاف جو ساٹھ برس سے حکومتوں کی لونڈی بنی رہی؟ اب جب چند سالوں سے سر اٹھانے کی کچھ جرا¿ت پیدا کر سکی تو سر کچلنے کی باتیں ہونے لگیں؟

نامور خاتون کالم نگار طیبہ ضیاء چیمہ اپنے ایک کالم میں لکھتی ہیں ۔۔۔۔۔اس قسم کے لطیفوں کے آخر میں ہا ہا ہا ہا لکھا جاتا ہے یعنی کسی کو ہنسی آئے یا نہ، لطیفہ لکھنے والا سمجھا دیتا ہے کہ بات ہنسی والی ہے۔ جس کو موقع ملا اس نے سب سے پہلے عدلیہ کا ضمیر خریدا۔ جرنیلوں اور بیوروکریسی کو خریدا۔ اب چلا رہے ہیں کہ ہماری بلیاں ہمیں ہی میاﺅں؟ ان کے اکابرین بھی آف دی ریکارڈ موجودہ سیاست سے بیزاری کا اظہار کر رہے ہیں لیکن ان کے مفادات اور کھایا پیا نے سب کی بولتی بند کر رکھی ہے۔ قیادت کے ساتھ کھانے پینے والے بھی پھنس جائیں گے یہ بھی ساتھیوں کو منظور نہیں۔ ٹولہ پریشانی اور تذبذب کا شکار ہے۔ تحریک تو درکنار تانگہ گھوڑا چلانے کی سکت نہیں۔ جھوٹ اور دو نمبری کے پیروں میں دم خم نہیں ہوتا۔ عوام شو دیکھنے کے لئے بیتاب ہیں۔ بے انصافی کےخلاف احتجاج ان کا حق ہے ضرور کریں، لیکن ذرا احتیاط سے اداروں کے ضمیر بھی ماضی رکھتے ہیں۔ بہت کچھ باہر آئے گا۔ روک سکتے ہو تو روک لو۔ مسلم لیگ (ن) کے سینیٹر مشاہد اللہ خان نے سپہ سالار جنرل باجوہ سے دھرنے سے متعلق سوال کیا

جس کے جواب میں آرمی چیف نے کہا کہ اگر ثابت ہو گیا کہ دھرنے کے پیچھے فوج تھی تو مستعفی ہو جاؤں گا۔ انہوں نے کہا کہ دھرنا ہوا تو میرے ذہن میں لال مسجد کا واقعہ بھی آیا، میں نے ڈی جی آئی ایس آئی سے کہا کہ دھرنے والوں سے بات کریں، بات ہوئی تو پتہ چلا ان کے چار مطالبات ہیں، پھر وہ ایک مطالبہ پر آ گئے، سعودی عرب جاتے ہوئے بھی دھرنے سے متعلق معلومات لیتا رہا۔ لاپتہ افراد کے حوالے سے سوال کے جواب میں آرمی چیف نے کہا کہ لاپتہ افراد کی مختلف وجوہات ہیں، کچھ لوگ خود غائب ہو کر اپنے آپ کو لاپتہ ظاہر کرواتے ہیں، ایجنسیاں صرف ان افراد کو تفتیش کے لئے تحویل میں لیتی ہیں جو ملک دشمن سرگرمیوں میں ملوث ہوں۔ قائد ایوان راجا ظفرالحق نے کہا کہ آرمی چیف نے سخت سوالات کا اچھے انداز میں جواب دیا، اسٹیبلشمنٹ کے حوالے سے حکومتی خدشات سے متعلق آرمی چیف نے کہا کہ وہ آئین کے تابع اور جمہوریت کےساتھ ہیں اور حکومت نے جو بھی فیصلہ کیا اسے مانیں گے۔ سینیٹ میں قائد ایوان راجہ ظفر الحق نے آرمی چیف اور اعلیٰ حکام کو بریفنگ کیلئے بلانے کی تحریک پیش کی تھی۔ آرمی چیف نے کہا کہ رات کو ٹی وی ٹاک شوز میں بیٹھنے والے دفاعی تجزیہ کار ہم نہیں بھیجتے اور نہ وہ پاک فوج کے ترجمان ہوتے ہیں ہمیں قانون کے مطابق چلنا اور عوام کو جواب دینا ہے۔ سپہ سالار کے حالیہ بیانات کے بعد بھی حکومتی احتجاجی تحریک کامیاب ہو سکے گی؟ مسلم لیگی ذہن اداروں کے خلاف سڑکوں پر نکل سکیں گے؟

Should Computer Science be a mandatory part of a high school curriculum? The answer depends on the time horizon, and also on how one defines “computer science.” The question is moot in the short-term. In the long run, computational thinking and digital literacy will be mandatory, although perhaps integrated in other fields or introduced earlier, before high school.
In the short run: schools would need to offer computer science courses before requiring students study it.
Before answering this question, one must first ask whether schools can actually teach computer science. Today, most high schools don’t teach computer science, they don’t have a computer science teacher, so mandating that every student learn a field that isn’t even offered is silly. Fortunately, schools throughout the U.S. are now taking steps to offer computer science. And 56% of teachers believe computer science should be mandatory for all students [1]. And with Code.orgtraining tens of thousands of new C.S. teachers per year, making computer science mandatory may be possible in less than a decade.
In the long-run: parts of computer science (computational thinking and digital literacy) will be mandatory learning, starting in grades K-8.
Computational thinking – which is the logic, algorithmic thinking, and problem-solving aspects of computer science – provides an analytical backbone that is useful for every single student, in any career. Schools teach math to students regardless of whether they want to become mathematicians, because it is foundational. The same is true of computer science. Consider, at the university level, computer science satisfies graduation requirements for 95% of B.S. degrees [2].
Digital literacy – understanding things like what is the “cloud,” what are “cookies,” or how does “encryption” work – these are useful for every student, regardless of whether they want to become a lawyer, a doctor, or a coder. They are just as foundational as learning about photosynthesis, the digestive system, or other topics one learns in high school science classes.
The coding aspects of computer science – learning the syntax of a specific programming language such as C++, Java, or Python – the syntactical expertise in one language is least likely to stand the true test of time. The programming language you learn in high school is unlikely to be popular 10 years later, and it’s hard to argue that everystudent must be required to learn any single language. However, teaching a coding language is often necessary for teaching computational thinking or algorithm design, and so it’s a key part of most C.S. education.
The U.S. education system is rapidly changing to broaden access to C.S., and even to require it in many regions.
In many U.S. states (e.g. Arkansas, Virginia, Indiana), computational thinking and digital literacy have already been integrated into the mandatory standards of learning for K-8 students. In these states, the most important foundational aspects of this field will be taught to every student before they even enter high school. When students receive that background in primary school, they can decide for themselves whether they want to take a deeper programming course in high school.
At Code.org, we don’t advocate for making computer science mandatory in high school. We advocate for integrating aspects of it in primary school (grades K-8). But we also support the ambitious school districts (such as Chicago, and Oakland) that have already decided to make it a mandatory high school course.